387

پسند کی شادی کا ایک سال میں ڈراپ سین، نو مسلم لڑکی عائشہ نے شوہر عامر کھوسہ پر اغوا اور شادی کے بعد مسلسل تشدد کا الزام عائد کرکے خلع کا مطالبہ کردیا۔ رپوٹ طلحہ راجپوت

ڈیرہ اللہ یار:
پسند کی شادی کا ایک سال میں ڈراپ سین، نو مسلم لڑکی عائشہ نے شوہر عامر کھوسہ پر اغوا اور شادی کے بعد مسلسل تشدد کا الزام عائد کرکے خلع کا مطالبہ کردیا۔

ایک سال قبل لڑکی کنول(عائشہ) نے گھر سے فرار ہو کر کوئٹہ کی عدالت میں اسلام قبول کرکے عامر کھوسہ سے نکاح کیا۔

گزشتہ روز لڑکی عائشہ شوہر کے مبینہ تشدد سے فرار ہو کر پولیس تھانہ پہنچی، جوڈیشل مجسٹریٹ ون کی عدالت میں شوہر کے خلاف بیان ریکارڈ کروایا۔

عامر کھوسہ نے اغوا کرکے زبردستی اسلام قبول کروایا اور شادی کی، شادی کے بعد مسلسل تشدد کرتا رہا ہے۔ جان کو خطرہ لاحق ہے تحفظ فراہم کیا جائے۔ نو مسلم عائشہ

پولیس تھانے اور عدالت کے باہر بیوی کو منانے کے لیے شوہر کی منتیں، بیوی کا مسلسل انکار۔ اب تمہارے سے نہیں رہ سکتی۔ نو مسلم عائشہ کا شوہر عامر کو دو ٹوک جواب

جوڈیشل مجسٹریٹ نے بیان ریکارڈ کرنے کے بعد نو مسلم لڑکی عائشہ کو دارالامان بھیجنے کا حکم دے دیا۔

لڑکی عائشہ کے دارالامان منتقلی کے بعد شوہر مایوس ہو کر لوٹ گیا۔ لڑکی کے والدین کا لڑکی حوالگی کا مطالبہ بھی عدالت نے مسترد کردیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں